27

بیگم کلثوم نواز کی رحلت

    بیگم کلثوم نواز کی رحلت

    – وہ ایک باوقار اور شائستہ خاتون تھیں
    – انہوں نے بیوی‘ ماں اور بعدازاں تین بار خاتون اول کے طور پر اپنی ذمہ داریاں بہترین طریقے سے ادا کیں

    ( تحریر و تحقیق: طارق اقبال‘ ووپ میڈیا)

    کویت: سابق وزیر اعظم نواز شریف کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز منگل کے روز لندن میں ایک سال تک کینسر جیسے موذی مرض سے لڑتے ہوئے آخر کار اللہ کو پیاری ہو گئیں۔ ان کی عمر 68برس تھی۔ وہ ایک باوقار اور شائستہ خاتون تھیں اور مشرف کے دور آمریت میں انہوں نے ن لیگ کی سیاست کو زندہ رکھنے میں قائدانہ کردار کیا تھا۔ کلثوم نواز نے 1950ء میں اندرون لاہور کے کشمیری خاندان میں جنم لیا جس کی پہلوانی کا پورے برصغیر میں شہرہ تھا‘ مشہور زمانہ رستم زماں گاما پہلوان ان کے نانا تھے۔ گریجوایشن کے بعد 1971ء میں کلثوم نواز کی سابق وزیر اعظم نواز شریف سے شادی ہوئی اس وقت وہ صنعت کاری سے وابستہ تھے اور سیاست میں نہیں آئے تھے ۔کلثوم نواز نے شاد ی کے بعد اپنی تعلیم کا سلسلہ جاری رکھا اور پنجاب یونیورسٹی سے اردو میں ایم اے کیا‘ انہیں ادب اور شاعری سے خصوصی لگائو تھا ‘

    مزید پڑھیں: اہلیہ نواز شریف بیگم کلثوم نواز کی نماز جنازہ لندن میں ادا کر دی گئی، جسد خاکی جمعہ کو پاکستان لایا جائے گا تدفین سسر میاں شریف کے پہلو میں ہوگی۔

    انہوں نے بیوی‘ ماں اور بعدازاں تین بار خاتون اول کے طور پر اپنی ذمہ داریاں بہترین طریقے سے ادا کیں۔ وہ اپنے سراپا سے خالص گھریلو مشرقی خاتون نظر آتی تھیں تاہم اپنے شوہر کی سیاست کی آزمائشی گھڑیوں میں انہوں نے جس طرح قائدانہ کردار ادا کیا اور پارٹی کو منظم انداز میں جدوجہد پر آمادہ کیا‘وہ تاریخ کا حصہ ہے۔ کلثوم نواز کی کوششوں سے ہی شریف خاندان کو سعودی عرب جانے کی اجازت ملی تھی۔اللہ ان کے درجات بلند فرمائے اور ان کے لواحقین کو صبرجمیل سے نوازے۔آمین۔ ک ادارہ بننے کی طرف پیشقدمی کر رہا ہے۔

    2017 میں نوازشریف کی نا اہلی کے بعد بیگم کلثوم نے این اے 120 سے الیکشن لڑا۔ بیماری کے باعث وہ انتخابی مہم بھی نہ چلاسکیں۔ انھوں نے الیکشن تو جیت لیا لیکن شدید علالت کے باعث حلف نہ اٹھا سکیں۔ بیگم کلثوم نواز کی زندگی جدو جہد کا استعارہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

بیگم کلثوم نواز کی رحلت” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں