انٹرنیشنل

تنزانیہ میں کم سن بچوں کی اعضاء کٹی لاشیں برآمد

تنزانیہ میں گزشتہ دنوں 10 بچے اغواء کیے گئے تاہم سیکیورٹی فورسز کے آپریشن کے دوران ان بچوں کی اعضاء کٹی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔رپورٹس کے مطابق اغواء ہونے والے بچوں کو قتل کرکے ان کے جسم کے مختلف اعضا کو کاٹ کر جسم سے علیحدہ کردیا گیا تھا۔تنزانیہ کے نائب وزیر صحت فوسٹائن نے میڈیا کو بتایا کہ بچوں کے جسم سے نازک حصوں اور دانتوں کو الگ کرکے لاشوں کو ایسے ہی چھوڑ دیا گیا ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ یہ عمل جادو ٹونے میں استعمال ہوتا ہے۔جس میں جعلی عامل بچوں کے اعضا منگواتے ہیں۔
تنزانیہ میں برص کا بڑھتا ہوا مرض اس جرم میں اضافے کا باعث بن رہا ہے۔اس کی وجہ یہ ہے کہ برص میں مبتلا بچوں کو بدقسمتی کی علامت سمجھا جاتا ہے اور جعلی عامل ایسے بچوں کے اعضاء استعمال کر کے اس مرض کا رلاج کرتے ہیں۔نائب وزیر صحت کا افسوس ناک واقعے کے بارے میں مزید کہنا تھا کہ مجرموں کو گرفتار کرکے کڑی سزا دلوائی جائے گی تاہم لوگوں میں تعلیم اور شعور میں اضافے کے لیے اقدامات بھی کیے جائیں گے۔

To Top