کویت

بھاشا’ دیامیر ڈیمز اور نمل یونیورسٹی کیلئے فنڈز جمع کرنے کی’ سفارتخانہ پاکستان میں تقریب

کویت: پاکستان میں بھاشا’ دیامیر ڈیمز اور نمل یونیورسٹی کیلئے فنڈز جمع کرنے کی تقریب سفارتخانہ پاکستان میں منعقد ہوئی۔ سینٹرمحمد اعظم سواتی اور وزیراعظم پاکستان کے مشیر برائے سیاسی امور نعیم الحق مہمانان خصوصی تھے جو انصاف ویلفیئر سوسائٹی کویت کی دعوت پر کویت کا دورہ کر رہے تھے۔عزت مآب سفیر پاکستان غلام دستگیر،سفارتحانہ کے حکام اور کمیونٹی کی معروف شخصیات نے تقریب میں شرکت کی۔نظامت کے فرائض ریاض انجم نے ادا کئے۔ تقریب کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن کریم سے ہوا جس کی سعادت حافظ محمد شبیر ڈائریکٹر پاکستان بزنس سنٹر نے حاصل کی۔

نعت رسول مقبول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پیش کرنے کی سعادت اعجاز مغل کو حاصل ہوئی۔

ابتدائی کلمات کیلئے چیئرمین ایگزیکٹو بورڈ پیر امجد حسین’ انصاف ویلفیئر سوسائٹی کویت نے قرآن کریم کی آیات مقدسہ سے اپنے خطاب کا آغاز کیا، جس کا ترجمہ کچھ یوں ھے کہ” اللہ تعالیٰ نے تمہیں جو مال عطا کیا ہے اسے مستحقین تک پہنچا دو” ۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان اور سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے ڈیم منصوبہ کا آغاز کیا ،انہیں پورا یقین ہے کہ ڈیم بنے گا۔۔وہ سینیٹر محمد اعظم خان سواتی اور وزیراعظم کے مشیر برائے سیاسی امور نعیم الحق کو کویت میں انصاف ویلفیئر سوسائٹی اور پاکستانی کمیونٹی کی طرف سے خوش آمدید کہتے ہیں،وہ ایک نیک مقصد کیلئے یہاں تشریف لائے ہیں۔کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی انتظار کر رہی تھی کہ انتخابات کے بعد کوئی اہم حکومتی شخصیات کویت میں تشریف لائیں گی،ان کا شکریہ کہ وہ تشریف لائے،یہاں پر مقیم پاکستانی کمیونٹی کے دو اہم مسائل ہیں،پاکستانیوں کیلئے ویزے بڑی دیر سے بند ہیں جس کی وجہ سے فیملیاں بہت پریشان ہیں یہاں پر تقریباً ایک لاکھ پاکستانی مقیم ہیں جو سالانہ تقریباً ایک ارب ڈالرز پاکستان بھیجتے ہیں ان کی تعداد بڑھے گی تو یقینا زر مبادلہ کی رقم بھی بڑھے گی

۔قومی فضائی کپنی پی آئی اے کی پروازوں کی بحالی کا بھی مسئلہ ہے جس پر پہلے سے بھی بہت کام ہو چکا ہے،عزت مآب سفیر پاکستان غلام دستگیر اس کیلئے کوششیں کر رہے ہیں ،پی آئی پروازوں کی جلد بحالی کی امید کرتے ہیں ،کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی نے جب بھی وطن عزیز کو ضرورت پیش آئی فنڈز دینے میں ایک دوسرے بسے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ۔محترم شخصیات عبیدالحمن ارائیں،عتیق عدنان ،حافظ محمد شبیر ،محمد عارف بٹ ڈیم کیلئے پہلے بھی فنڈز دے چکے ہیں اج وہ مزید اعلانات کریں گے۔

کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کی ممتاز سماجی شخصیت ،گلف کنسلٹ کے سی ای او اور ایم ڈی انجینئر عبیدالرحمن ارائیں نے کہا کہ وہ سینیٹر محمد اعظم خان سواتی اور نعیم الحق کو کویت میں خوش آمدید کہتے ہیں ،یہاں پر لوگ وزیراعظم عمران خان کا انتظار کر رہے ہیں مگر ہم جانتے ہیں کہ ان کے پاس بڑے Critical ایشوز ہیں،امید ہے آپ کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کے مسائل سے وزیراعظم کو آگاہ کریں گے۔1993 میں عمران شوکت خانم میموریل کینسر ہسپتال کیلئے فنڈز جمع کرنے کویت آئے تھے تو اس وقت کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی نے 95 ہزار دینار جمع کئے تھے۔

انجینئر عبیدالرحمن ارائیں نے مذید کہا کہ چونکہ وہ خود ایک سول انجینئر ہیں وہ جانتے ہیں کہ کالا باغ ڈیم تعمیر نہ کرنے سے پاکستان کے ساتھ بڑی زیادتی ہوئی ہے ایک اہم مسئلہ تھا جسے سیاسی بنا دیا گیا۔پانی کا مسئلہ پاکستان کی بقا کا مشئلہ ہے،انہیں امید ہے کہ بھاشا اور دیامیر ڈیمز بنیں گے عمران ایسی شخصیت ہیں کہ جن کے ہوتے ہوئے ہیرا پھیری کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا،صرف آج ہی نہیں ڈیمز کی تعمیر تک ڈونیشن کا یہ سلسلہ جاری رہنا چاہیے۔

عزت مآب سفیر پاکستان غلام دستگیر کو دعوت خطاب دی گئی،انہوں نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ وہ سفارت خانہ پاکستان کی طرف سے سینئر محمد اعظم خان سواتی اور وزیراعظم کے مشیر برائے سیاسی امور نعیم الحق کو کویت میں خوش آمدید کہتے ہیں۔کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کو جو اہم مسائل درپیش ہیں ان میں پاکستانیوں کیلئے کویتی ویزوں کی بندش اور پی آئی اے پروازوں کی بندش سر فہرست ہیں۔پہلے پی آئی اے اور شاہین ائیر کی ہفتہ وار سات ہروازیں ہوتی تھیں سات نہیں تو چار پروازیں ہی شروع کر دیں ۔ڈیمز کے سلسلہ میں پہلے سے ہی فنڈز پر کام ہو رہا ہے،نیشنل بینک اف کویت میں اکاؤنٹ کھول دیا گیا ۔

سوشل میڈیا کے ذریعہ لوگوں کو مطلع کیا گیا،کوئی براہ راست سفارتخانہ میں ڈونیشن دینا چاہے تو اسے باقاعدہ رسید جاری کی جاتی ہے اس سلسلہ میں فنکشن بھی کیا گیا۔پیر امجد اور دیگر شخصیات نے پاکستان جا کر بھی فنڈز دئیے۔35 ہزار ڈالرز سے زیادہ رقم جمع ہوچکی ہے۔کویت میں مقیم پاکستانی کمیونٹی بڑی متحرک ہے جب بھی بلایا جائے تشریف لے آتے ہیں۔انسانیت کی خدمت کیلئے بڑا کام کر رہے ہیں،ایسوسی ایشن آف پاکستانی ڈاکٹرز ان کویت ہر سال دو مرتبہ فری میڈیکل کیمپس کا اہتمام کرتی ہے ،حافظ محمد شبیر نے بھی رواں سال ایک پرائیویٹ کلینک میں چار فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد کیا تھا۔وہ ایک مرتبہ پھر معزز مہمانان کو خوش آمدید کہتے ہیں۔

سینیٹر محمد اعظم خان سواتی کو دعوت خطاب دی گئی۔وہ عزت مآب سفیر پاکستان غلام دستگیر،پیر امجد حسین اور ملک اخلاق کا شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوں نے انہیں کویت آنے اور یہاں پر مقیم پاکستانی کمیونٹی سے خطاب کا موقعہ دیا۔وہ سمندر پار مقیم پاکستانیوں کے مسائل کو سمجھتے ہیں کیونکہ وہ خود بھی 30 سال ملک سے باہر گذار چکے ہیں وہ الحمدللہ پاکستان کی پارلیمانی تاریخ میں سب سے زیادہ تعلیم یافتہ رکن پارلیمنٹ ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج ڈیمز کے علاوہ نمل یونیورسٹی کیلئے بھی فنڈز جمع کئے جائیں گے۔یہ یونیورسٹی 2001 میں قائم کی گئی تھی اس کا معیار آکسفورڈ یونیورسٹی کے معیار پر لانے کی کوششیں جاری ہیں ویاں 10 ہزار طلباء وطالبات زیور تعلیم سے آراستہ ہو رہے ہیں جن میں اکثریت کے والدین غریب ہیں اور فیسیں ادا نہیں کر سکتے۔عمران نے قوم کو کردار،دیانت داری۔سچائی اور پہادری سے نوازا۔30 اور 31 اگست 2014 کی شب وہ عمران خان کے ساتھ تھے جب براہ راست شیلنگ ہو رہی تھی گولیاں ہمارے پاس سے گذر رہی تھیں ان سے کہا کہ آپ نیچے کنٹینر میں چلے جائیں تو ان کا کہنا تھا کہ وہ ایسا نہیں کر سکتے ان کے کارکنان گولیوں کا سامنا کر رہے ہیں اور وہ کنٹینر میں چھپ کر بیٹھ جائیں وہ 10 سال سے ان کے ساتھ ہیں وہ یقین سے کہتے ہیں کہ ڈیم بن کر رہے گا
سفارتخانہ پاکستان میں تقریب میں بھاشا’ دیامیر ڈیمز کےلئے ا کڑور ٣٤ لاکھ اور نمل یونیورسٹی کیلئے ٣٥ لاکھ کی کثیر رقم فنڈز جمع کئے گئے- جو بہت بڑی کامیابی کی علامت ھے‘ کہ فنڈز جمع کرتے ھوئے اکٹھی کی گئی

حوالہ: ووپ میڈیا

To Top