پاکستان

مجھے میرے خاندان سے کیوں ملنے نہیں دیا جا رہا: شہباز شریف

لاہور: مسلم لیگ ن کے صدر اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں شہباز شریف کا کہنا ہے کہ ایک طرف تو بھارتی ایجنٹ کلبھوشن کو اس کی فیملی سے ملاقات کی اجازت دی جاتی ہے مگر دوسری طرف ایک پاکستانی کو اس کے اہل خانہ سے ملنے نہیں دی جاتی۔ تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں آشیانہ ہاؤسنگ سکینڈل کی سماعت کے دوران شہباز شریف نے موقف اختیار کیا کہ مجھے جھوٹے کیسز میں ملوث کیا گیا ہے، نیب حکام بلیک میل کرتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہ میں
بلڈ کینسر کا مریض ہوں میرا چیک اپ بھی نہیں کرایا جا رہا اور نہ ہی میری فیملی سے ہفتہ وار ملاقات کرائی جا رہی ہے، ڈاکٹر سے چیک اپ کراتے رہنا میری ضرورت ہے، میں موت کے منہ سے واپس آیا ہوں۔دوسری جانب احتساب عدالت نے نیب کے وکیل کو بار بار بولنے پر کھری کھری سنا دیں اور شہباز شریف کو کھل کر بات کرنے کی ہدایت کی۔ شہبازشریف نے کہا کہ میرے ساتھ بہت ظلم اور زیادتی ہورہی ہے، پاکستان کے دشمن بھارتی ایجنٹ کلبھوشن کو اس کی فیملی سے ملاقات کی اجازت ملی مگر مجھے ایک پاکستانی ہونے پر بھی اپنے اہل خانہ سے ملنے نہیں دیا جا رہا۔

To Top